Video Widget

« »

بدھ، 11 جون، 2014

کراچی جل رہا ہے








ہے ہر سو موت کا موسم کراچی جل رہا ہے
ہاں بے حس ہو گئے ہیں ہم کراچی جل رہا ہے

اجڑ جائے اجڑتی ہے جو بستی
حکومت بس رہے قائم کراچی جل رہا ہے

لہو آنکھوں سے رستا ہے ہماری
یہاں سینہ زنی پیہم کراچی جل رہا ہے
 

لحد ہے مضطرب قائد کی میرے
ہے کب سے رو رہا پرچم کراچی جل رہا ہے

خدا کے نام پر ہے قتل انساں
ہوا رسوا بنی آدم کراچی جل رہا ہے

کھلے پھرتے ہیں قاتل ملک بھر میں
ہوا کا رک رہا ہے دم کراچی جل رہا ہے

غضب ہے لوگ بھی سوئے ہوئے ہیں
کوئی ہوتا نہیں برہم کراچی جل رہا ہے

بتاؤ کب تلک لاشے اٹھائیں
کریں اب کب تلک ماتم کراچی جل رہا ہے

خدایا کیا کوئی آ کر ہمارے
رکھے گا زخم پر مرہم کراچی جل رہا ہے

یہ طوق اقتدار چند روزہ ایک لعنت
ہیں صفدر حکمراں بے غم کراچی جل رہا ہے


 _______________________________________________________________________


شاعر۔ صفدر ھمٰدانی

 پیشکش ۔ عالمی اخبار

پڑھنے کا شکریہ
 اپنی قیمتی آراہ سے ضرور نوازیں
ایک تبصرہ شائع کریں